گیزل

ہم پہ جو ہنستے ہیں ہم ان پہ ہنسائیں سب کو
آؤ، نکلو، ذرا آئینہ دکھائیں سب کو

آج بے خوف و خطر کیوں نہ سرِ عام ہم لوگ
سارے راز اپنی محبت کے بتائیں سب کو

دین و دنیا کے ستم ہم نے بہت جھیل لیے
بیچ بازار میں اب آگ لگائیں سب کو

چھپ کے اِس عشق کا دم کھُٹنے نہ پائے عالمؔ
کھل کے منبر سے یہ پیغام سنائیں سب کو


3 Replies to “گیزل”

  1. I think this may be the first gazal I have read on homosexuality in Urdu. Glad to know they’re being written. I’m a voracious reader though, I want more added to your collection!

  2. This ghazal was a wonderful way of highlighting the many themes of ‘Chay’. Good, inventive work by the magazine and the poet.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *